جاپان اور جنوبی کوریا کے سربراہوں کا دوطرفہ تعلقات کے فروغ پر اتفاق

31
Print Friendly, PDF & Email

جاپان اور جنوبی کوریا کے سربراہوں نے دو طرفہ تعلقات کو فروغ دینے پر مکمل اتفاق کیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس کے موقع پر جاپان اور جنوبی کوریا کے رہنماؤں نے بظاہر دوران جنگ مشقت کے معاملے کو ذہن میں رکھتے ہوئے، دوطرفہ تعلقات کو ٹھیک کرنے اور بہتر بنانے پر اتفاق کیا ہے۔

جاپان کے وزیراعظم کشیدا فومیو اور جنوبی کوریا کے صدر یون سن یول نے بدھ کے روز اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس کے موقع پر تقریباً آدھے گھنٹے تک ملاقات کی۔

دونوں ممالک کے سربراہوں نے اتفاق کیا کہ دونوں ممالک اہم پڑوسی ہیں جنہیں مل کر کام کرنے کی ضرورت ہے. انہوں نے جاپان اور جنوبی کوریا کے ساتھ ساتھ امریکہ کے ساتھ تعلقات کو وسعت دینے کی اہمیت کی تصدیق کی۔

وزیراعظم کشیدا فومیو اور صدر یون سن یول نے شمالی کوریا سے متعلقہ مسائل کے حل کے لئے بھی مل کر کام کرنے پر اتفاق کیا۔ صدر یون سن یول نے اغواء کے معاملے میں اس مسئلے کو حل کرنے کے جاپان کے موقف کی حمایت کا اعادہ کیا۔

Advertisement

دونوں رہنماؤں نے اس بات کی تصدیق کی کہ وہ اپنے وزرائے خارجہ کے درمیان بات چیت سمیت جاری سفارتی تبادلوں کو تیز کرنے کا حکم دیں گے، اور ساتھ ساتھ خود بھی قریبی رابطے میں رہنے کی کوشش کریں گے۔

جون میں اسپین میں نیٹو سربراہ اجلاس کے بعد وزیراعظم کشیدا فومیو اور صدر یون سن یول کے درمیان پہلی بالمشافہ ملاقات تھی۔

Advertisement

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.