پی سی بی پی ایس ایل 9 کو ایڈجسٹ کرنے کے لیے ویسٹ انڈیز کی ہوم سیریز کو ری شیڈول کرنے پر غور کر رہا ہے۔

84
Print Friendly, PDF & Email


پی ایس ایل گورننگ کونسل کا اجلاس جمعہ کو لاہور میں ہوا، جس میں پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کے حکام اور پی ایس ایل ٹیم کے مالکان اور آفیشلز نے شرکت کی۔

مذکورہ اجلاس کے دوران یہ تجویز پیش کی گئی کہ پاکستان سپر لیگ کا اگلا ایڈیشن فروری اور مارچ میں کرایا جائے۔

بورڈ حکام نے فرنچائزز کو آگاہ کیا ہے کہ انہیں پی ایس ایل 9 میں جگہ بنانے کے لیے ویسٹ انڈیز کے خلاف ہوم سیریز کو دوبارہ شیڈول کرنا ہوگا۔واضح رہے کہ کیریبین ٹیم فروری اور مارچ میں دو ٹیسٹ میچز کے لیے پاکستان کا دورہ کرنے والی ہے۔ 3 T20I میچز۔

بورڈ کے ایک عہدیدار نے یہ بھی بتایا کہ چونکہ پاکستان میں سخت حفاظتی اقدامات پر عمل کیا جاتا ہے، اس لیے پی سی بی کو بہت زیادہ رقم خرچ کرنی پڑ رہی ہے۔ اس لیے بورڈ کے ایک عہدیدار کی جانب سے پی ایس ایل کا اگلا ایڈیشن متحدہ عرب امارات سے شروع کرنے کی تجویز دی گئی۔ بورڈ آفیشل نے مزید تجویز دی کہ یو اے ای میں ابتدائی میچز کے بعد ایونٹ کو پاکستان واپس لایا جا سکتا ہے۔

اس معاملے پر فرنچائزز کی طرف سے مخالفت کی گئی ہے۔ مالکان نے واضح طور پر کہا ہے کہ تمام میچز صرف پاکستان میں ہونے چاہئیں۔

واضح رہے کہ بورڈ کے بعض افسران اب بھی بڑے ہوٹلوں میں قیام اور ماضی میں یو اے ای میں ہونے والے پی ایس ایل میچز کے دوران ڈالر میں ملنے والے یومیہ الاؤنس کی یاد تازہ کرتے ہیں۔ اس لیے وہ چاہتے ہیں کہ ایونٹ کو واپس متحدہ عرب امارات منتقل کر دیا جائے۔

ملاقات کے دوران نجم سیٹھی نے اگلے ایڈیشن میں مزید دو ٹیمیں شامل کرنے کی اپنی سفارش کا اعادہ کیا اور کہا کہ وہ ایک ایسا مالیاتی ماڈل فراہم کریں گے جس سے موجودہ فرنچائزز کو کوئی نقصان نہیں پہنچے گا۔ جس پر ایک مالک نے طنزیہ ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ سیٹھی نے ماضی میں پی ایس ایل کی ٹیمیں بیچتے وقت بھی یہی کہا تھا لیکن ایسا کچھ نہیں ہوا۔

نجم سیٹھی نے یہ بھی کہا کہ بہت سے لوگ پی ایس ایل کی نئی ٹیمیں خریدنے میں دلچسپی کا اظہار کر رہے ہیں اور ویمن لیگ میں سرمایہ کاری میں بھی دلچسپی رکھتے ہیں۔ پی سی بی امید کر رہا ہے کہ پی ایس ایل فرنچائزز بھی ویمن لیگ میں حصہ لیں گی لیکن امید ہے کہ وہ فرنچائز فیس ادا کریں گی۔

پی ایس ایل کے آٹھویں ایڈیشن کو آمدن کے لحاظ سے ’بہت اچھا‘ قرار دیا گیا تھا، تاہم کمائے گئے منافع کی رقم ابھی ظاہر نہیں کی گئی۔ واضح رہے کہ اکاؤنٹس کو 5 مئی تک فرنچائزز سے شیئر کرنا ہے تاہم اس کی آخری تاریخ 15 مئی تک بڑھا دی گئی ہے، نشریاتی حقوق اور دیگر امور کے حوالے سے مختلف کمیٹیاں بھی قائم کر دی گئی ہیں۔



جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.