پاکستان صحت کے لیے 2 ارب ڈالر مختص کرنا چاہتا ہے۔

22
Print Friendly, PDF & Email

اسلام آباد:

پاکستان مختلف بیماریوں سے لڑنے کے لیے اگلے چار سالوں میں 2 بلین ڈالر کی غیر ملکی فنڈنگ ​​پر نظر رکھے ہوئے ہے، جبکہ صحت کی حفاظت کے لیے امریکہ کے ساتھ تعاون کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔

فنڈز مختلف شعبوں میں فراہم کیے جاتے ہیں، خاص طور پر خاندانی منصوبہ بندی، غذائیت، ہیپاٹائٹس سی اور ذیابیطس کے خاتمے کے ساتھ ساتھ مختلف وائرل بیماریوں کے پھیلاؤ کو روکنے کی سرگرمیوں کے لیے۔ سابق عبوری وزیر صحت ڈاکٹر ندیم جان نے بتایا کہ وزارت صحت نے 1.6 بلین ڈالر گرانٹ اور بقیہ 400 ملین ڈالر قرضے حاصل کرنے کی کوشش کی۔

ڈاکٹر ژان نے کہا کہ عبوری حکومت کے دوران وزارت صحت کو GAVI، گلوبل فنڈ، ورلڈ بینک، یو ایس ایڈ، فارن اینڈ کامن ویلتھ آفس، بل اینڈ میلنڈا گیٹس فاؤنڈیشن، اسلامک ڈویلپمنٹ فنڈ سے تقریباً 1 بلین ڈالر کے وعدے ملے۔ بینک (ITB)، فرانسیسی ترقیاتی ایجنسی اور نجی خیراتی ادارے۔ ڈاکٹر جان کے مطابق، مزید 1 بلین ڈالر کی گرانٹس اور قرضے گلوبل فنڈ اور غیر سرکاری اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ بات چیت کے عمل میں ہیں۔

تقریباً پانچ سالوں میں کسی بھی امریکی صدر کی طرف سے پہلی بات چیت میں، صدر جو بائیڈن نے پاکستان کے ساتھ تعلقات کو فروغ دینے کے شعبوں میں سے ایک کے طور پر "زیادہ صحت کی حفاظت” کو اجاگر کیا ہے۔ امریکہ ایسے تعلقات استوار کرنے میں بھی دلچسپی رکھتا ہے جو اقتصادی ترقی اور سب کے لیے تعلیم تک رسائی کو فروغ دیں۔ رواں سال جنوری میں پاکستان میں ہیلتھ سیکیورٹی کے حوالے سے ایک عالمی سربراہی اجلاس بھی ہوا۔ صحت سے متعلق تعاون پر بائیڈن کا زور پاکستان کو مختلف بیماریوں سے لڑنے میں مدد مانگنے کا موقع فراہم کرتا ہے۔ ڈاکٹر جان نے نوٹ کیا کہ پاکستان کی عالمی صحت کی قیادت کو دیکھتے ہوئے، گلوبل ہیلتھ سیکیورٹی مومنٹم، 70 ممالک کا اتحاد، صحت اور آب و ہوا کو بہتر بنانے کے لیے استعمال کیا جا سکتا ہے۔ اس رفتار کو موسمیاتی انصاف کی وکالت کے لیے بھی استعمال کیا جا سکتا ہے۔

پاکستان کو گلوبل فنڈ سے 289 ملین ڈالر، Gavi سے 210 ملین ڈالر، ورلڈ بینک سے 100 ملین ڈالر، حکومت برطانیہ سے 30 ملین ڈالر اور بل اینڈ میلنڈا گیٹس فاؤنڈیشن سے 100 ملین ڈالر ملنے کی توقع ہے۔ سابق وزیر صحت نے کہا کہ عبوری حکومت نے IDB سے 100 ملین ڈالر اور فرانسیسی ترقیاتی ایجنسی سے 55 ملین ڈالر مختص کرنے پر بات چیت شروع کر دی ہے۔

ڈاکٹر یان کے مطابق امریکی حکومت نے پاکستان کو ہیلتھ سیکیورٹی کے شعبے میں 50 ملین ڈالر کی گرانٹ دینے کا منصوبہ بنایا ہے جس پر عمل شروع ہو چکا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ چین نے پاکستان میں صحت کے شعبے کو جدید بنانے کے لیے تقریباً 300 ملین ڈالر کی سرمایہ کاری میں بھی دلچسپی ظاہر کی ہے۔

ڈاکٹر جان نے کہا کہ پاکستان خرابی صحت، غذائی قلت، آبادی میں اضافے، متعدی اور غیر متعدی امراض کی وجہ سے اپنی جی ڈی پی کا 15 فیصد سے زیادہ کھو دیتا ہے۔ تاہم، ملک صحت کی دیکھ بھال پر اپنی جی ڈی پی کا صرف 1 فیصد خرچ کرتا ہے، جسے بڑھا کر 3 فیصد کیا جانا چاہیے۔ انہوں نے مزید کہا کہ صحت اور معیشت کا گٹھ جوڑ غیر دریافت شدہ ہے اور اس میں بہت زیادہ ہم آہنگی کی صلاحیت ہے۔ پاکستان کا فارماسیوٹیکل سیکٹر بڑی حد تک محفوظ ہے، جس کی وجہ سے پیداواری نقصان اور برآمدات کے لیے بھوک کی کمی ہے۔ انہوں نے فارماسیوٹیکل مصنوعات کی برآمدات بڑھانے اور انسانی وسائل میں سرمایہ کاری کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔

انہوں نے اس ضرورت پر بھی زور دیا کہ نئی حکومت عالمی سطح پر صحت کے تحفظ کی قیادت کرے اور رکن ممالک کے ساتھ "اسلام آباد وبائی معاہدے” کو باقاعدہ بنائے، جو جنوری میں ہونے والے سربراہی اجلاس میں طے پایا تھا۔ سابق وزیر نے کہا کہ نئی حکومت پاکستان کے صحت کے شعبے اور معیشت کے لیے اس نئے صحت اور اقتصادی ماڈل کو بروئے کار لانے اور زیادہ سے زیادہ بنانے کے لیے پرعزم ہے۔ اس کے لیے سخت فیصلوں کی ضرورت پڑ سکتی ہے جو سیاسی طور پر مشکل ہو سکتے ہیں، لیکن قومی نقطہ نظر سے بہت قابل قبول ہیں۔

ڈاکٹر جین نے کہا کہ 432 ملین ڈالر کا نیشنل ہیلتھ سپورٹ پروگرام شروع کیا گیا ہے، جس کے بعد پاکستان کو بجٹ سپورٹ کی دوسری قسط فراہم کی جائے گی تاکہ صحت کی اہم خدمات کے پیکج کے نفاذ میں خلا کو پُر کیا جا سکے۔ عبوری حکومت نے ترقیاتی بجٹ کے ذریعے تکنیکی مدد کا طریقہ کار بھی قائم کیا۔ پولیو کے خاتمے کے اقدام کے لیے تین سالوں میں 155 ملین ڈالر کی فنڈنگ ​​IDB اور دیگر عطیہ دہندگان سے حاصل کی گئی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ چلڈرن انویسٹمنٹ فنڈ نے تقریباً 100 ملین ڈالر کے مماثل فنڈ کے ذریعے پاکستان میں غذائیت پر کام کرنے پر بھی اتفاق کیا ہے، جس پر بات چیت کی جا رہی ہے۔ ڈاکٹر جان نے وضاحت کی کہ پولیو کے خاتمے کی کوششوں کو حکومتی ڈھانچے میں ضم کرنے اور حکومتی ملکیت کو یقینی بنانے سے پاکستان کو پولیو کے خلاف جنگ میں بہت فائدہ ہوگا۔ حکومتی ڈھانچے کو ذمہ داری تفویض کرکے پولیو ویکسینیشن مہم کی کوآرڈینیشن، جوابدہی اور پائیداری کو بہتر بنایا جائے گا۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.